بول، کہ لب آزاد ہیں تیرے
بول، زباں اب تک تیری ہے

تیرا ستواں جسم ہے تیرا
بول، کہ جان اب تک تیری ہے

دیکھ کہ آہن گر کی دوکان میں
تند ہیں شعلے سرخ ہے آہن

کھلنے لگے قفلوں کے دھانے
پھیلا ہر اک زنجیر کا دامن

بول، یہ تھوڑا وقت بہت ہے
جسم و زباں کی موت سے پہلے

بول، کہ سچ زندہ ہے اب تک
بول، جو کچھ کہنا ہے کہہ لے

شاعر فیض احمد فیض

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s