ساری دیوار سیہ ہوگئی, تا حلقۂ دام_ _
راستے بجھ گئے رُخصت ہُوئے رہ گیر تمام
اپنی تنہائی سے گویا ہوئی پھر رات مری
ہو نہ ہو, آج پھر آئی ہے____ ملاقات مری
اک ہتھیلی پہ حِنا ، ایک ہتھیلی پہ لُہو
اک نظر زہر لئے ,_ _ایک نظر میں دارو
دیر سے منزلِ دل میں کوئی آیا نہ گیا
فرقتِ درد میں , _ بے آب ہُوا تختۂ داغ

کس سے کہیے کہ بھرے رنگ سے زخموں کے ایاغ
اور پھر, خود ہی چلی آئی, ملاقات مری

آشنا موت ,جو دشمن بھی ہے ,غم خوار بھی ہے
وہ جو ہم لوگوں کی, قاتل بھی ہے, دلدار بھی ہے_ _
__________
فیض _

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s