میرے مالک نے مرے حق میں یہ احسان کیا 
خاک ناچیز تھا میں سو مجھے انسان کیا 

اس سرے دل کی خرابی ہوئی اے عشق دریغ
تو نے کس خانہء مطبوع کو ویران کیا

ضبط تھا جب تئیں چاہت نہ ہوئی تھی ظاہر
اشک نے بہہ کے مرے چہرے پہ طوفان کیا

تنہا شوق کی دل کے جو صبا سے پوچھی
اک کفِ خاک کوئی ان نے پریشان کیا

مجھکو شاعر نہ کہو میر کہ صاحب میں نے
درد و غم کتنے کیے جمع، تو دیوان کیا 

(میر تقی میر)

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s