بزم میں باعثِ تاخیر ہُوا کرتے تھے
ہم کبھی تیرے عِناں گِیر ہُوا کرتے تھے

ہائے اب بُھول گیا رنگِ حِنا بھی تیرا
خط کبھی خُون سے تحریر ہُوا کرتے تھے

کوئی تو بھید ہے اِس طَور کی خاموشی میں
ورنہ ہم حاصِل ِ تقریر ہُوا کرتے تھے

ہجر کا لُطف بھی باقی نہیں، اے موسمِ عقل!
اِن دنوں نالۂ شب گیر ہُوا کرتے تھے

اِن دنوں دشت نوردی میں مزا آتا تھا
پاؤں میں حلقۂ زنجیر ہُوا کرتے تھے

خواب میں تُجھ سے مُلاقات رہا کرتی تھی
خواب شرمندۂ تعبیر ہُوا کرتے تھے

تیرے الطاف و عنایت کی نہ تھی حد، ورنہ
ہم تو تقصیر ہی تقصیر ہُوا کرتے تھے

مصطفیٰ زیدی

( گریبان )

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s