ہم پہ رہتے ہو کیا کمر کستے
اچھے ہوتے نہیں جگر خستے

ہنستے کھینچا نہ کیجیے تلوار
ہم نہ مر جائیں ہنستے ہی ہنستے

شوق لکھتے قلم جو ہاتھ آئی
لکھتے کاغذ کے دستے کے دستے

سیر قابل ہیں تنگ پوش اب کے
کُہنیاں پھنستی چولیاں چستے

رنگ لیتی ہے سب ہوا اس کا
اس سے باغ و بہار ہیں رستے

اِک نگہ کر کے اُن نے مول لیا
بک گئے آہ ہم بھی کیا سستے

میر جنگل پڑے ہیں آج جہاں
لوگ کیا کیا یہیں تھے کل بستے

(میر تقی میر)

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s