اے ابرِ تر تو اور کسی سمت کو برس
اس ملک میں ہماری ہے یہ چشمِ تر ہی بس

حرماں تو دیکھ پھول بکھیرے تھی کل صبا
اک برگِ گُل گرا نہ جہاں تھا مرا قفس

مژگاں بھی بہہ گئیں مِرے رونے سے چشم کی
سیلابِ موج مارے تو ٹھہرے ہے کوئی خس

مجنوں کادل ہوں محملِ لیلیٰ سے ہوں جدا
تنہا پھروں ہوں دشت میں جوں نالۂ جرس

اے گِریہ اس کے دل میں اثر خوب ہی کیا
روتا ہوں جب میں سامنے اس کے تو دے ہے ہنس

اس کی زباں کے عہد سے کیونکر نکل سکوں
کہتا ہوں ایک میں تو سناتا ہے مجھ کو دس

حیراں ہوں میر نزع میں، اب کیا کروں بھلا
احوالِ دل بہت ہے مجھے فرصتِ یک نفس

میر تقی میر

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s