مجھے اے اہلِ کعبہ یاد کیا مے خانہ آتا ہے
اِدھر دیوانہ جاتا ہے، ادھر پروانہ آتا ہے

نہ دل میں غیر آتا ہے، نہ صاحب خانہ آتا ہے
نظر چاروں طرف ویرانہ ہے، ویرانہ آتا ہے

تڑپنا، لوٹتا اُڑتا جو بے تابانہ آتا ہے
یہ مرغِ نامہ بر آتا ہے یا پروانہ آتا ہے

مرے مژگاں سے آنسو پونچھتا ہے کس لئے ناصح
ٹپک پڑتا ہے خود، جو اس شجر میں دانہ آتا ہے

یہ آمد ہے، کہ آفت ہے، نگہ کچھ ہے اور کچھ ہے
الہیٰ خیر مجھ سے آشنا بیگانہ آتا ہے

وہ نازک ہیں تو کیا اپنے سے خنجر پھر نہیں سکتا
تجھے کچھ ننگ بھی اے ہمتِ مردانہ آتا ہے

ترا کوچہ ہے وہ دارالشفا بیمارِ وحشت کو
پری آتی ہے بن جاتا ہے جو دیوانہ آتا ہے

دمِ تقریر نالے حلق میں چھریاں چبھوتے ہیں
زباں تک ٹکڑے ہو ہو کر، مرا افسانہ آتا ہے

رخِ روشن کے آگے شمع رکھ کر وہ یہ کہتے ہیں
اُدھر جاتا ہے دیکھیں، یا اِدھر پروانہ آتا ہے

جگر تک آتے آتے سو جگہ گرتا ہوا آیا
تیرا تیرِ نظر آتا ہے یا مستانہ آتا ہے

کبھی چلنا کبھی رکنا کبھی ملنا کبھی کھنچنا
ترے خنجر کو ہر اندازِ معشوقانہ آتا ہے

وہ شوخی، شرارت، بے حیائی، فتنہ پردازی
تجھے کچھ اور بھی اے نرگسِ مستانہ آتا ہے

سکندر آئینے سے، جام سے جم خوش نہ ہو اتنا
کوئی مے کش کو دیکھے ہاتھ جب پیمانہ آتا ہے

بھرے کچھ آنکھ میں آنسو، پڑے کچھ حلق میں چھالے
قفس میں یہ میّسر مجھ کو آب و دانہ آتا ہے

وہی جھگڑا ہے فرقت کا، وہی قصّہ ہے الفت کا
تجھے اے داغ کوئی اور بھی افسانہ آتا ہے ۔۔

داغ

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s