نامرادی کا دلِ زار کو شکوا ہے عبث
اور کچھ اس کے سوا اُن سے تمنّا ہے عبث

واقفِ رحم نہیں اس شہِ خوباں کی نظر
عاشقی مملکتِ حسن میں رُسوا ہے عبث

خُو سے اُس محوِ تغافل کے جو آگاہ نہیں
آرزو وعدۂ جاناں پہ شکیبا ہے عبث

حالِ دل اُن سے نہ پوشیدہ رہا ہے، نہ رہے
اب تو اس رازِ نمودار کا اخفا ہے عبث

ہجرِ ساقی میں بھلا کس کو خوش آئے گی شراب
ہم نشینو! طلبِ ساغر و مینا ہے عبث

مست غفلت ہے وہ ظالم جو نہیں بے خودِ عشق
ہوشیاری کا ترے دور میں دعوا ہے عبث

ہم کو اس شوخ سے امیدِ کرم ہے لیکن
یاس کہتی ہے کہ حسرت یہ تمنّا ہے عبث

(مولانا حسرت موہانی)

 

 

 

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s