ہم کوئے مغاں میں تھے، ماہِ رمضاں آیا
صد شکر کہ مستی میں جانا، نہ کہاں آیا

گو قدر محبت میں تھی سہل مری لیکن
سستا جو بکا میں تو مجھ کو بھی گراں آیا

رسم اٹھ گئی دنیا سے اِک بار مروّت کی
کیا لوگ زمیں پر ہیں، کیسا یہ سماں آیا

یہ نفع ہوا نقصاں چاہت میں کیا جی کا
کی ایک نگہ اُن نے، سو جو کا زیاں آیا

بلبل بھی تو نالاں تھی پر سارے گلستاں میں
اِک آگ پھکی میں جب، سر گرمِ فغاں آیا

طائر کی بھی رہتی ہے پھر جان چمن ہی میں
گل آئے جہاں، وہ بھی جوں آبِ رواں آیا

خلوت ہی رہا کی ہے مجلس میں تو یوں اس کی
ہوتا ہے جہاں یک جا میں میر جہاں آیا

(میر تقی میر)

 

 

 

 

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s