زلفوں کو میں چھوا سو، غصّے ہوئے کھڑے ہو
یہ بات ایسی کیا ہے، جس پر الجھ پڑے ہو

منہ پھیر پھیر لو ہو، ہر بات میں ادھر سے
یاں کس ستم زدہ سے، آزردہ ہو، لڑے ہو

نرمی مخالفوں سے، سختی موافقوں سے
واں موم سے بنے ہو، یاں لوہے سے کڑے ہو

مل جاؤ مغ بچوں سے، تو داڑھی ہو تبّرک
ہر چند شیخ صاحب! تم بوڑھے ہو، بڑے ہو

ہوتے ہیں خاکِ رہ بھی، لیکن نہ میر ایسے
رستے میں آدھے دھڑ تک، مٹی میں تم گڑے ہو

(میر تقی میر)

 

 

 

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s