ادھر سے چاند ھم دیکھیں، اُدھر سے چاند تم دیکھو
نگاہوں کا تصادم ھو اور اپنی عید ھو جائے

ساغر صدیقی

ان کے ابرؤ خمیدہ کی طرح تیکھا تھا
اپنی آنکھوں میں بڑی دیر چبھا عید کا چاند

جانے کیوں آپ کے رخسار دہک اٹھتے ہیں
جب کبھی کان میں چپکے سے کہا عید کا چاند

علاوہ عید کے ملتی ہے اور دن بھی شراب
گدائے کُوچۂ مے خانہ نامراد نہیں
ہوئی عید، سب نے پہنے طرب و خوشی کے جامے
نہ ہوا، کہ ہم بھی بدلیں یہ لباسِ سوگواراں

میر تقی میر

 

 

 

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s